محل تفکر و تعقل ،انسانی دل یا دماغ :تعارف وتجزیہ Center of Thinking, Human Heart or Brain: Introduction and analysis Section Urdu

##plugins.themes.academic_pro.article.main##

Dr. Saeed Ahmad
Muhammad Sarwar

Abstract

This article is trying to explore whether the center of thinking in the human body is the heart or brain. According to Holy Quran, Hadiths of the Prophet Muhammad (PBUH), and a majority of Islamic theologians, the center of thinking is the heart in the human body. This can be substantiated based on a large number of Quranic verses & Hadiths where it has been mentioned that the heart is the center of thinking in the human body. On the other hand, modern psychologists and medical scientists along with a few contemporary Islamic theologians including Abul Ala Maududi & Javed Ahmed Ghamdi are of the view that the brain controls thinking in the human body.  They say that the heart has no function except pumping and circulating blood in the human body. It is the human brain actually that controls thinking in the human body. If both views are comparatively analyzed, it can be concluded that both heart & brain have the functions of thinking but in different fields. The human brain controls thinking related to the needs of the physical body while the human heart controls thinking related to the soul, spirituality, divine guidance & direction to the right path (Hidayat).  

##plugins.themes.academic_pro.article.details##

How to Cite
Ahmad, D. S., & Sarwar, M. (2022). محل تفکر و تعقل ،انسانی دل یا دماغ :تعارف وتجزیہ. Al Qalam, 27(1), 290-304. https://doi.org/10.51506/al qalam.v27i1.1704

References

اس موقف کی تفصیلات و دلائل ذکرکرنے سے پہلے مناسب معلوم ہوتا ہے کہ متعلقہ اصطلاحات کی کچھ وضاحت ہوجائے۔ قرآن و حدیث میں محل تفکر کے لیے قلب، فؤاد اور لب کے الفاظ بیان ہوئے ہیں ۔ لغت عرب میں قلب کا معنی پھیر دینا ہے ۔( لوئیس معلوف، المنجد اردو، دارالاشاعت، کراچی، ۱۹۹۴ء، مادہ ق ل ب ) اصطلاح میں اس سے مراد دل، وسط اور کسی بھی چیز کے مغز اور خلاصہ کے لیے بولا جاتا ہے۔ (رازی، محمد بن ابی بکر، مختار الصحاح، محقق: یوسف الشیخ محمد، مکتبہ العصریہ الدار النموذجیہ، بیرروت، ۱۹۹۹ء، ص ۲۵۸، مادہ ق ل ب ) علامہ ابن منظور افریقی لکھتے ہیں کہ قلب دل کا ایک ٹکڑا ہے جس کا تعلق نیّات کے ساتھ ہوتاہے۔ اسی طرح امام فراء کے نزدیک اس سے فہم و تدبر بھی مراد لیا جاتا ہے۔ (ابن منظور، محمد بن مکرم، لسان العرب، دار صادر، بیروت، ۱۴۱۴ھ، ص ۶۷۸، مادہ : ق ل ب ) فوأد جمع افئدہ ہے جس کا معنی دل ہے (رازی، محمد بن ابی بکر، مختار الصحاح، محقق: یوسف الشیخ محمد، مکتبہ العصریہ الدار النموذجیہ، بیرروت، ۱۹۹۹ء، ص ۲۳۳، مادہ ف آ د ) ا لبتہ بسا اوقات اس سے عقل و خرد بھی مراد لیا جاتا ہے۔ (ابن منظور، محمد بن مکرم، لسان العرب، دار صادر، بیروت، ۱۴۱۴ھ، ص ۷۰۶، مادہ ف آ د ) اسی طرح لب کی جمع الباب ہے لغت میں کسی بھی چیز کے خالص حصہ کو لب کہا جاتا ہے (لوئیس معلوف، المنجد اردو، دارالاشاعت، کراچی، ۱۹۹۴ء، مادہ ل ب ب ) جبکہ صاحب مختار الصحاح نے اس کا معنی عقل بھی کیا ہے ۔ (رازی، محمد بن ابی بکر، مختار الصحاح، محقق: یوسف الشیخ محمد، مکتبہ العصریہ الدار النموذجیہ، بیرروت، ۱۹۹۹ء، ص ۲۷۸، مادہ ل ب ب ) درج بالا تین اصطلاحات کا خلاصہ یہی نکلتا ہے کہ قرآن و حدیث میں عقل و خرد اور تفکر و تعقل کے لیے جو اصطلاحات بیان ہوئی ہیں ان کا خلاصہ یہ ہے کہ انسان کے جسم میں ایک ایسا مادہ ہے جس کا تعلق نیّات اور تفکر و تعقل سے ہے۔ دراصل یہی مادہ ہی انسان کا خلاصہ ہے جس کا محل اللہ نے قرآن میں الصدر یعنی سینہ کو قراردیا ہے۔( رازی، محمد بن ابی بکر، مختار الصحاح، محقق: یوسف الشیخ محمد، مکتبہ العصریہ الدار النموذجیہ، بیرروت، ۱۹۹۹ء، ص ۱۷۴، مادہ ف آ د)
سورۃ اعراف : ۱۷۹
سورۃ حج : ۴۶
سورۃ ق: ۳۷
سورۃ بقرہ: ۱۹۷
سورۃ نجم: ۱۱
سورۃ آل عمران: ۲۹
الرازی، محمد بن عمر، مفاتیح الغیب، دار احیاء التراث، بیروت، 1420ھ، ج 23، ص234، سورہ حج : 46
الرازی، محمد بن عمر، مفاتیح الغیب، دار احیاء التراث، بیروت، 1420ھ، ج 23، ص231، سورہ حج : 46
الرازی، محمد بن عمر، مفاتیح الغیب، دار احیاء التراث، بیروت، 1420ھ، ج 8، ص195سورہ آل عمران: ۲۹
زمخشری، محمود بن عمر، الکشاف عن حقائق التنزیل و عیون الاقاویل، دار الکتاب العربی، بیروت، 1407ھ، ج 3، ص 162، سورہ حج : 46
اصلاحی، امین احسن ، تدبر قرآن، فاران فاونڈیشن، لاہور، ج ۵، ص ۲۶۴، ۲۶۵سورہ حج: ۴۶
انجینئر محمد علی مرزا نے محل تفکر و تعقل کے بارے میں قرآنی اور جدید سائنسی موقف پر سیر حاصؒ گفتگو کرنے کے بعد فرمایا کہ قرآن نے محل تفکر و تعقل دل کو قراردیا ہے جبکہ جدید سائنس کا موقف ابھی تک رہا ہے کہ محل تفکر دماغ ہے مگر عین ممکن ہے کہ مستقبل میں سائنسی تحقیقات سے ثابت ہوجائے کہ دماغ کی طرح دل بھی سوچتا ہے ۔ آخر میں اپنا راجح موقف یوں بیان کیا کہ جسم کے سوچنے کا منبع دماغ جبکہ روح کے سوچنے کا منبع انسانی دل ہے۔ تفصیل کے لیے ان کی ویڈیو کا لنک بھی درج کیا جاتا ہے۔ https://youtu.be/5mHMZ9bOK5c
ڈاکٹر اسرار احمد، بیان القرآن، انجمن خدام القرآن، خیبر پختونخوا، ۲۰۱۱، جلد۴، ص ۲۲۳، سورۃ حج: ۴۶
ڈاکٹر محمد اسلم ، روح القرآن،ادارہ ھدی للناس، لاہور، ج ۷، ص ۵۶۸،سورۃ حج: ۴۶
بخاری، محمد بن اسماعیل، الجامع الصحیح، دارلکتب العلمیہ، بیروت، ۲۰۰۰، کتاب الایمان، باب فضل من اسبرأ لدینہ، حدیث 52
ابن حجر عسقلانی، احمد بن علی، فتح الباری شرح صحیح البخاری، دارالمعرفہ، بیروت، 1379، جلد 1، ص 129
بدرالدین عینی، محمود بن احمد ، عمدۃ القاری شرح صحیح البخاری، دار احیاء التراث العربی، بیروت، س ن، جلد 1 ، ص 302
ارسطو، اجزاء الحیوان، ص: ۷۰، ۱۰۰، ۱۳۲ بحوالہ https://darulifta.info/d/ashrafia/fatwa/nR3/%D8%B9%D9%82%D9%84-%DA%A9%D8%A7-%D9%85%D8%B1%DA%A9%D8%B2-%DA%A9%DB%81%D8%A7%DA%BA-%DB%81%DB%92-%D8%AF%D9%84-%DB%8C%D8%A7-%D8%AF%D9%85%D8%A7%D8%BA
الرازی، محمد بن عمر، مفاتیح الغیب، دار احیاء التراث، بیروت، 1420ھ، ج 23، ص234، سورہ حج : 46
بو علی سینا، الشفاء (طبیعات) ، ج ۳، ص ۱۳، ۴۰، ۴۶، ۲۵۴ https://darulifta.info/d/ashrafia/fatwa/nR3/%D8%B9%D9%82%D9%84-%DA%A9%D8%A7-%D9%85%D8%B1%DA%A9%D8%B2-%DA%A9%DB%81%D8%A7%DA%BA-%DB%81%DB%92-%D8%AF%D9%84-%DB%8C%D8%A7-%D8%AF%D9%85%D8%A7%D8%BA
فارابی، محمد بن ترخان، آراء ایل المدینہ الفاضلہ، ص ۴۸، ۴۹
قرآن و حدیث کی نظر میں لفظ قلب دل کی اس کیفیت اور صفت پر بولا جاتا ہے جو تعقل اور تفکر کا ذریعہ ہے اور اسی کیفیت کو اہل علم کبھی لطیفہ اور کبھی نورانی جوہر وغیرہ کہہ دیتے ہیں ۔ اور اس کیفیت کا دل سے ایسا ہی گہرا ، لازمی اور نظر نہ آنے والا تعلق ہے جیسے اطباء Medical Scientists كے نز دیک دماغ کے ساتھ سوچ اور تفکر کا تعلق ہے جو نہ نظر آتا ہے اور نہ ہی محسوس کیا جاسکتا ہے۔
غزالی، محمد بن محمد ، احیاء العلوم الدین،مکتبہ المدینہ دعوت اسلامی، لاہور، س ن، ج ۳، ص ۹۸
محمود، سید قاسم، سائنس کیا ہے، الفیصل ناشران کتن، لاہور، 2003,، ص 7
https://cognitiontoday.com/the-heart-vs-mind-battle-that-need-not/
غزالی، محمد بن محمد، تہافۃ الفلاسۃ، محقق: الدکتور سلیمان دنیا، دار المعارف، قاہرہ، س ن،ص ۳۵۶
Alshami, Ali M. "Pain: Is it all in the brain or the heart?." Current Pain and Headache Reports 23, no. 12 (2019): 1-4.
Shiv, Baba, and Alexander Fedorikhin. "Heart and mind in conflict: The interplay of affect and cognition in consumer decision making." Journal of consumer Research 26, no. 3 (1999): 278-292.
30 Shiv, Baba, and Alexander Fedorikhin. "Heart and mind in conflict: The interplay of affect and cognition in consumer decision making." Journal of consumer Research 26, no. 3 (1999): 278-292.
ان کے علاوہ دیگر آرٹیکل بھی اس موضوع پر موجود ہیں جو ڈاکٹر آرمور کی تحقیق کی تائید کررہے ہیں ۔
Campos, Isabel Durães, Vitor Pinto, Nuno Sousa, and Vitor H. Pereira. "A brain within the heart: A review on the intracardiac nervous system." Journal of molecular and cellular cardiology 119 (2018): 1-9.
Armour, J. Andrew. "Potential clinical relevance of the ‘little brain’on the mammalian heart." Experimental physiology 93, no. 2 (2008): 165-176.
Armour, J. Andrew. "Neuroradiology: Anatomical & Functional Principles.
Alshami, Ali M. "Pain: Is it all in the brain or the heart?." Current Pain and Headache Reports 23, no. 12 (2019): 1-4.

Fredrickson, Barbara L., and Christine Branigan. "Positive emotions broaden the scope of attention and thought‐action repertoires." Cognition & emotion 19, no. 3 (2005): 313-332.
Morris, Steven M. "Achieving collective coherence: Group effects on heart rate variability coherence and heart rhythm synchronization." Altern Ther Health Med 16, no. 4 (2010): 62-72.
McCraty, Rollin. "The energetic heart: Bioelectromagnetic communication within and between people." Bioelectromagnetic Medicine. New York: Marcel Dekker (2004): 541-62.
https://cognitiontoday.com/the-heart-vs-mind-battle-that-need-not/
https://cognitiontoday.com/the-heart-vs-mind-battle-that-need-not/

DB Error: Unknown column 'Array' in 'where clause'