غیر سودی بینکاری کی شرعی ہم آہنگی اورمعاصر معاشی تحدیات: شرعی جائزہ

The Sharī’ah Compliance of Non-interest Banking and Contemporary Economic Challenges-A Critical Analysis

  • Dr. Hafiz Abdul Basit Khan Associate Professor, Shaikh Zayed Islamic Centre, University of the Punjab, Lahore, Pakistan.
Keywords: Non-interest banking; Islamic Banking; Sharī’ah compliance; Contemporary economic challenges; Islamic financial system

Abstract

The discussion over the Shari’ah compliance of the current non-interest banking system, primarily known as an Islamic banking system, has continued for a long. This paper is aimed to provide a critical analysis of objections raised on this system. The discussion revolves around the question that what are the objections to this system. The Muslim jurists have focused on the juristic side of the matter. Of what deficiencies and objections, they have pointed out, most of them have been addressed by those who are driving this system.  But the point that needs to be projected is that this system has hardly succeeded in developing any other distinction from the interest-based system other than interest. When it is carried out on the principle of a Fractional reserve system, this banking model will no longer seem to produce any positive change in macroeconomics globally. The writer has concluded that this system only provides a way out to avoid interest-based transactions otherwise it has no other significance in the perspective of being acknowledged as a part of the Islamic financial system.    

References

اوصاف احمد،پروفیسر، اسلامی بینک کاری، اسلام آباد، انسٹیٹیوٹ آف پالیسی اسٹڈیز، ۱۹۹۲ء، ص۳۲

Auṣāf Aḥmad, Prof. Islamī Bankārī, Islamabad, Institute of Policy studies, 1992, pg. 32

ایضاً،ص۱۹

Ibid, pg. 19

Siddiqi, M.Najatullah, Islamic Banking and Finance in theory and practice; A survey of state of the art, Islamic Economic Studies,(ed) Tariqullah Kahn, Jaddah, Islamic Development Bank, Vol,13, No,2, P2

اسلامی بینکاری کی تاریخ کے لیے ملاحظہ ہو: اسلامی بینک کاری ص ۲۸۔۳۳

For History of Islamic Banking see: Islamī Bankārī, pg. 28-33

Islamic Banking and Finance in theory and practice, P3

یہ بات بلاسود بینک کاری پر اسلامی نظریاتی کونسل کی رپورٹ کے ابتدائیے اورحرف آغاز میں مذکورہے۔ابتدائیہ ڈاکٹر عبدالواحد ہالے پوتا کا اورحرف آغاز جسٹس ڈاکٹر تنزیل الرحمن کا لکھا ہوا ہے۔

بلاسود بینک کاری پر اسلامی نظریاتی کونسل کی رپورٹ کا حرف آغاز، ص۳

See: Report of IIC on Interest free banking, pg. 3

شیخ محمود احمد، سود کی متبادل اساس، لاہور، ادارہ ثقافت اسلامیہ، ۱۹۸۶ء

Shaykh Maḥmūd Aḥmad, Sūd ki Mutabādil Asās, Lahore, Idāra Thaqāfat Islamiyyah, 1986AD.

نجات اللہ صدیقی، ڈاکٹر، بلاسود بینک کاری، لاہور، اسلامی پبلی کیشنز، ۱۹۶۹ء

Nijātullah Ṣiddīquī, Dr, Bilā Sūd Bankārī, Lahore, Islamic Publication, 1969AD

محمد تقی عثمانی، مفتی، اسلام اورجدید معیشت وتجارت، کراچی، مکتبہ معارف القرآن، ۲۰۰۳ء، ص۱۴۳-۱۳۸

Muḥammad Taqī ‘Uthmānī, Muftī, Islam awr Jadīd Ma’īshat wa Tijārat, Karachi, Maktabah Mu’ārif al-Qur’ān, 2003AD, pg. 138-143

مفتی رشید احمد لدہیانوی،احسن الفتاوی،کراچی،ایچ ایم سعید اینڈ کمپنی،س۔ن،۷/۱۱۶۔۱۲۵

Muftī Rashīd Aḥmad Ludhyānvī, Aḥsan al-Fatāwā, Karachi, H.M Sa’īd and company, 7/116-125

مروجہ اسلامی بینکاری اورتصویر کے بارے میں ملک کے چاروں صوبوں کے جید علماءکرام اورمفتیان عظام کا متفقہ فتوی، (ماہنامہ) بینات، مدیر، سعید احمد جلال پوری، مولانا، کراچی، جامعة العلوم الاسلامیہ بنوری ٹاون، اکتوبر ۲۰۰۸ءص۸۴-۸۲

Al-Bayyināt (Monthly), Editor Sa’īd Aḥmad Jalālpurī, Mawlānā, Karachi, Jām’iah al-‘Ulūm al-Islamiyyah Binori Town, October 2008AD, pg. 82-84

متذکرہ بالا مختصر فتویٰ کے ساتھ ساتھ اس سے متعلقہ دو تحریرات موجود ہیں۔ مولانا رفیق احمد بالاکوٹی کا مضمون جس میں جمہور علماءکے موقف کا خلاصہ پیش کیا گیا ہے اور ایک مفصل تحریر جو لگ بھگ چار سو صفحات پر مشتمل ہے۔ مولف نے اختصار کی خاطر مانعین کے اعتراضات کے حوالہ کے طور پر صرف اسی مختصر مضمون پر اکتفا کیا ہے۔ تفصیل کیلئے ذیل کی مفصل تحریر ملاحظہ ہو:

رفقاءدار الافتاءجامعہ علوم اسلامیہ بنوری ٹاون، مروجہ اسلامی بینکاری، تجزیاتی مطالعہ، شرعی جائزہ، فقہی نقد و تبصرہ، ناشر، کراچی، مکتبہ بینات، جامعہ علوم اسلامیہ بنوری ٹاون، ۲۰۰۸ء

Murawwijah Islamī Bankārī, Maktabah Bayyināt, Karachi, Jāmi’ah Islamiya Binori Town, 2008AD.

رفیق احمد بالاکوٹی، مفتی، مروجہ اسلامی بینکاری اورجمہور علماءکے موقف کا خلاصہ، ماہنامہ بینات، اکتوبر ۲۰۰۸ء، ص ۸۶۔۹۱

Rafīq Aḥmad Bālākotī, Muftī, Murawwijah Islamī Bankārī awr Jamhūr ‘Ulemā ki mu’aqaf ka Khulāṣa, Bayyinay, oct 2008AD, pg. 86-91

حمید اللہ جان، مفتی، اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ناشر، لاہور، دار الافتاءوالارشاد جامعة الحمید، ۲۰۰۹ء، ص۸

Ḥamīdullah Jān, Muftī, Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, Lahore, Dār al-Iftā wa al-Irshād Jāmi’ah al-Ḥamīd, 2009AD, pg. 8

Imran Ashraf Usmani, Dr, Meezan Bank's Guide to Islamic Banking, Karachi, Dar-ul-Ishaat, 2002, P130

عبد الواحد،مفتی ڈاکٹر، فقہی مضامین،کراچی،مجلس نشریات اسلام،۲۰۰۶،ص۴۷۰

Abdul Wāḥid, Muftī Dr, Fiqhī Mazāmīn, Karachi, Majlis Nashriyāt Islam, 2006AD, pg. 470

اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ص ۸

Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, pg. 8

اس اعتراض کی تفصیلات کے لیے ملاحظہ ہو:

(الف) اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ص ۹۔۱۲

(ب) فقہی مضامین،ص ۴۸۶۔۴۹۵

a) Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, pg. 9-12

b) Fiqhī Mazāmīn, 479-495

محمد تقی عثمانی،مفتی، اسلام اور جدید معیشت و تجارت،کراچی،مکتبہ معارف القرآن،۲۰۰۳ء،ص۱۴۰

Muḥammad Taqī ‘Uthmānī, Muftī, Islam awr Jadīd Ma’īshat wa Tijārat, Karachi, Maktabah Mu’ārif al-Qur’an, 2003AD, pg. 140

اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ص ۲۹؛ مروجہ نظام بینکاری اورجمہور علماءکے موقف کا خلاصہ، ص ۸۹

Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, pg. 29; Murawwijah Islamī Bankārī awr Jamhūr ‘Ulemā ki mu’aqaf ka Khulāṣa, pg. 89

مروجہ نظام بینکاری اورجمہور علماءکے موقف کا خلاصہ، ص ۸۹

Murawwijah Islamī Bankārī awr Jamhūr ‘Ulemā ki mu’aqaf ka Khulāṣa, pg. 89

احسن الفتاوی،۷/۱۱۹

Ahsan al-Fatāwā, 7/119

اسلام اور جدید معیشت و تجارت،ص ۱۴۰

Islam awr Jadīd Ma’īshat wa Tijārat, pg. 140

تحریر الکلام فی مسائل الالتزام، بحوالہ اسلام اورجدید معیشت وتجارت، ص ۱۴۰

Taḥrīr al-Kalām Fi Masā’il al-Iltizām, ref. to Islam awr Jadīd Ma’īshat wa Tijārat, pg. 140

اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ص ۲۴۔۲۶

Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, pg. 24-26

احسن الفتاویٰ ،۷/۱۲۱

Aḥsan al-Fatāwā, 7/121

فقہی مضامین، ص۴۶۸۔۴۶۹

Fiqhī Mazāmīn, pg. 468-469

محمد تقی عثمانی، مفتی، فقہی مقالات، کراچی، میمن اسلامی پبلشرز، ۱۹۹۴ء، ۱/۲۶۸

Muḥammad Taqī ‘Uthmānī, Muftī, Fiqhī Maqālāt, Karachi, Memon Islamic Publishers, 1992Ad, 1/ 286

اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ص ۵۳۔۶۳

Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, pg. 53-63

فقہی مضامین، ص۷۹۴

Fiqhī Mazāmīn, pg. 794

صفقة فی صفقة کی معنی ہے کہ ایک معاملے میں دوسرا معاملہ شامل کرنا۔ تعلیق البیع کا مطلب ہے بیع کو کسی شرط فاسد کےساتھ معلق کرنا۔

اسلامی نظام معیشت کے تناظر میں موجودہ اسلامی بینکنگ پر ایک تحقیقی فتویٰ، ص ۷۳۔۸۳،مروجہ اسلامی بینکاری اورجمہور علماءکے موقف کا خلاصہ، ص ۹۸

Islamī Nizām Ma’īshat kay tanāzur main Mawjūdah Islamī Banking par aik Taḥqīqī Fatwā, pg. 73-83; Murawwijah Islamī Bankārī awr Jamhūr ‘Ulemā ki mu’aqaf ka Khulāṣa, pg. 98

تفصیل کیلئے ملاحظہ ہو:(۱) محمد تقی عثمانی، مفتی، غیر سودی بینکاری، کراچی، مکتبہ معارف القرآن، ۲۰۰۹ء، ص ۲۶۷۔۲۷۱(۲) اعجاز صمدانی، ڈاکٹر مولانا، اسلامی اور سودی بینکاری میں فرق، کراچی، مکتبہ کامل پورے، س۔ن، ص۳۔۱۰

Muḥammad Taqī ‘Uthmānī, Muftī, Ghayr Sūdī Bankārī, Karachi, Maktabah Mu’ārif al-Qur’ān, 2009AD, pg. 267-271

I’jāz Ṣamdānī, Dr, Islamī awr Sūdī Bankārī Main farq, Karachi, Maktabah Camal Pury, pg. 3-10

محمد تقی عثمانی، مفتی، اسلامی بینکاری کی بنیادیں، (مترجم) محمد زاہد، فیصل آباد، مکتبة العارفی،س۔ن، ص۱۴۲

Muḥammad Taqī ‘Uthmānī, Muftī, Islamī Bankārī ki bunyādain, translator Muḥammad Zāhid, Faisalabad, Maktabah ‘Arfi, pg. 142

اسلامی بینکاری کی بنیادیں، ص۲۴۲

Islamī Bankārī ki bunyādain, pg. 242

غیر سودی بینکاری، ص۵۳۳۔۵۵۳ (ملخص)

Ghayr Sūdī Bankārī, pg. 533-553 (abstract)

تفصیل کیلئے ملاحظہ ہو، غیر سودی بینکاری، ص ۷۷۲۔۷۹۲

For details see: Ghayr Sūdī Bankārī, pg. 772-792

تفصیل کیلئے ملاحظہ ہو، غیر سودی بینکاری، ص ۷۴۔۱۳۱

For details see: Ghayr Sūdī Bankārī, pg. 74-131

تفصیل کیلئے ملاحظہ ہو، غیر سودی بینکاری، ص ۷۵

For details see: Ghayr Sūdī Bankārī, pg. 75

غیر سودی بینکاری، ص ۲۷۵۔۲۷۶

Ghayr Sūdī Bankārī, pg. 275-276

مقالہ نگار نے یہ دونوں واقعات اسلامی بینک کے ایک شریعہ ایڈوائزر سے جو ملک کے ایک معروف دار الافتاء سے بھی منسلک ہیں،براہ راست سنے ہیں ۔

غیر سودی بینکاری، ص ، ۲۱۳۔۲۱۶

Ghayr Sūdī Bankārī, pg. 213-216

ایضاً، ص ۲۸۱

Ibid, 287

ایضاً، ص ۲۶۳

Ibid, 263

ایضاً، ص ۵۹

Ibid, pg. 59

اس نظام کے عمومی تعارف کے لیے ملاحظہ ہو

(i)https://www.investopedia.com/terms/f/fractionalreservebanking.asp

(ii)زاہد صدیق مغل،ضمیمہ(اسلامی بینکاری،غلط سوال کا جواب)،الشریعہ،مدیر،عمار خان ناصر،الشریعہ اکادمی،گوجرانوالہ،جلد ۲۱،شمارہ ۳،مارچ ۲۰۱۰،ص۳۶۔۴۲

Zāhid Ṣiddīque Mughal, Zamīma, (Islamī Bankārī, Galat Sawal ka Jawab), al-Sharī’ah, Editor Ammār Khān Nāṣir, al-Sahrī’ah Academy, Gujranwala. Vol. 21, no. 3, March 2010AD, pg. 36-42

Zubair Hasan,Prof., Credit creation and control: An Unresolved Issue In Islamic Banking, P:282,International Islamic University, Malaysia ؛Ahamed Kameel Mydin Meera & Dzuljastri Abdul Razak,Islamic Home Financing through Musharakah Mutanaqisah and al-Bay’ Bithaman Ajil Contracts: A Comparative Analysis,p:8, International Islamic University, Kuala Lumpur, Malaysia

۲۰۰۸ء کے معاشی بحران کا تجزیہ کرنے والوں نے اسلامی بینکوں کے اس بحران میں بہت حد تک محفوظ رہنے کی یہی توجیہ کی ہے کہ اس نظام میں مالیاتی ثالثی Debt Based نہیں بلکہ Assets Based ہے

There are also differences in terms of financial intermediation, the paper notes. While conventional intermediation is largely debt based, and allows for risk transfer, Islamic intermediation, by contrast, is asset based, and centers on risk sharing.

IMF Survey: Islamic Banks: More Resilient to Crisis?

Link: https://www.imf.org/en/News/Articles/2015/09/28/04/53/sores100410a

نیز یہ کہ اس بینکاری کے اصول اس بحران کی نوبت نہیں آنے دیتے،ملاحظہ ہے

Al-Qahṭānī, F., & Mayes, D. G. (2017). The global financial crisis and Islamic banking: The direct exposure to the crisis. Banks & bank systems, (12,№ 3), 100-112.

مگر یہ بات جزوی طور پر تو درست ہوسکتی ہے مگر کلی طور پر نہیں اس لیے کہ اس نظام میں زر تخلیق ضرور ہوتا ہے،یہ علیحدہ بات ہے کہ اس کا پھیلاؤ ویسا نہیں ہوتا جیسا سودی بینکاری میں ہوتا ہے۔

Hunjra, Dr. Ahmed Imran & Islam, Faridul & Verhoeven, Peter & Hassan, M. Kabir. (2022). The Impact of a Dual Banking System on Macroeconomic Efficiency. Research in International Business and Finance. 61. 101647. 10.1016/j.ribaf.2022.101647

Published
2022-12-31
How to Cite
Dr. Hafiz Abdul Basit Khan. (2022). غیر سودی بینکاری کی شرعی ہم آہنگی اورمعاصر معاشی تحدیات: شرعی جائزہ. Al Qalam, 27(2), 224-245. https://doi.org/10.51506/al qalam.v27i2.1711