مسلم قیادت پر عیسائی مشنری تحریک کے اثرات اور ان کا تدارک : سیرت النبی ﷺ کی روشنی میں

Impacts of Christian Missionary Movement on Muslim Leadership: An Analytical Study in the Light of Prophetic (PBUH) Preaching.

  • Muhammad Sarwar, Muhammad Zahid Zaheer Iqbal Phd Scholar, IIS, University of the Punjab, Lahore
Keywords: Leadership, Missionary Movement, Cairo Conference, Missionary Conferences, Prophets (PBUT), Crusades, Preaching

Abstract

Christian Missionary Movement has been remained influential in Muslim World since 17th century. It was the major objective of the Movement to convert Muslims to Christianity. At least, there prime focus has been remained on the conversion or make Muslim Leadership flexible for Christianity. Astonishing, Crusades provided foundations but 20th century was peak time of Missionary Movement. Elucidatory, in 1909 first Missionary Conference held in Cairo which boasted their activities in Muslim World. In this regard, a number of Muslim Leaders betrayed Muslims in Spain, Arab World and the Sub Continent by accompanying and serving for Missionaries. Contrary, the Preaching Method of Prophets (PBUT) was also to convert leaders and chiefs of tribes because the followers follow them blindly. So, whenever leaders accepted message of the Prophets (PBUT), the whole tribe immediately accepted the message. Inversely, whenever leaders and chiefs denied the message, Prophets (PBUT) had not succeeded much by inviting people to Allah Almighty. Thus, in this article the influences of Missionary Movement on Muslim Leadership will be analyzed in the light Prophetic style of preaching.

References

قوم کی تعمیر وترقی میں قیادت ہی کا بنیادی کردار ہوتا ہے۔ تاریخ کے مطالعہ سے اس بات کی تصدیق ہو جاتی ہے کہ ماضی میں جن اقوام نے ترقی کی اور عرصہ تک علمی و تہذیبی طور پر دنیا پر راج کیا ، ان اقوام کی پشت پہ مضبوط اور مخلص قیادت ملتی ہے مثلاً قوم سبا کی ترقی کا راز ملکہ سبا تھیں ، اسی طرح ذوالقرنین جس نے مشرق سے مغرب تک کا سفر کیا اور اپنی قوم کو یاجوج ماجوج کی شرانگیزیوں سے محفوظ کردیا ۔ عصر حاضر میں ترقی یافتہ اقوام کی کامیابی کے پیچھے بھی مضبوط قیادت کارفرما ہیں ۔ اس سلسلے میں موجودہ موجودہ چائنا کی مثال دی جاسکتی ہے جس کو بام عروج تک پہنچانے میں ماوزے تنگ جیسے زیرک و مخلص قائد کی شبانہ روز محنت ہمیں نظر آتی ہے۔

رازی، محمد بن ابی بکر۔ مختار الصحاح، محقق: يوسف الشيخ محمد ( بیروت: المکتبہ العصریہ، 1999ء)، ص 262

Rāzi, Mūḥammad bin ābi Bakr. Mūẖtār āl Shḥāḥ, edit: Yūwsūf āl Šaiẖ Mūḥammad۔ (Berwt: āl Maktabah ālʿaṣr,1999), p 262

رازی، محمد بن ابی بکر۔ مختار الصحاح، محقق: يوسف الشيخ محمد (بیروت: المکتبہ العصریہ، 1999ء)، ص 262

Rāzi, Mūḥammad bin ābi Bakr. Mūẖtār āl Shḥāḥ, edit: Yūwsūf āl Šaiẖ Mūḥammad (Berwt: āl Maktabah ālʿaṣr,1999), 263

فیروزالدین، مولانا۔ فیروز اللغات ( لاہور: فیروز سنز، 2005)۔ ص 1025

Ferūwz āl Diyn, Mawlānā۔ Ferūwz āl lūġāt۔ (Lāhūwr: Ferūwz sons, 2005),p 1025

متعلقہ آیات حسب ترتیب ملاحظہ ہوں : ص 38: 26، یوسف 12: 43، نساء 4: 83، مومن 40: 23، مائدہ 5: 12، بقرہ 2: 124، اعراف 7: 60

https://www.ajkiduniya99.in/2020/08/Missionary-kiya-hai.html

https://www.ajkiduniya99.in/2020/08/Missionary-kiya-hai.html

https://www.britannica.com/topic/Christianity/Third-transition-to-1950

https://www.ajkiduniya99.in/2020/08/Missionary-kiya-hai.html

http://darululoom-deoband.com/urdu/articles/tmp/1397019339%2007 Esai%20Missionary%20Schools_MDU_6_June_10.htm

Latourette, Kenneth Scott. “The Christian Missionary Movement of the Nineteenth and Twentieth Centuries: Some Peculiar and General Characteristics.” The Catholic Historical Review 23, no. 2 (1937): 153–59. http://www.jstor.org/stable/25013582.

Latourette, Kenneth Scott. “The Christian Missionary Movement of the Nineteenth and Twentieth Centuries: Some Peculiar and General Characteristics.” The Catholic Historical Review 23, no. 2 (1937): 153–59. http://www.jstor.org/stable/25013582.

عیسائی مشنریز کی کامیابی کے متعدد اسباب میں سے چند یہ ہیں ۔ ۱۔ عمومی طور پر مسلمانوں کا دین کی بنیادوں سے عدم آگاہی ۲۔ جہالت ۳۔ غیرت ایمانی میں ضعف ۴۔ دنیوی لالچ وحرص ۵۔ اغیار کی نقالی کا شوق ۶۔ اپنی تعریف و توصیف کا شوق /حب جاہ ۷۔ شہرت و تن آسانی کے مواقع کا متمنی ہونا ۸۔ کردار واخلاق کا ضعف ۹۔ نادانی و بے توجہی ۱۰۔ دین سے طبعی نفرت وبے زاری

ملکی و بین الاقوامی سطح، مکالمہ بین المذاہب ، مقصد جہاد وتزکیہ اور اسی طرح بہت ساری فروعی مسائل پر بحث ومباحثہ کے پس پردہ بھی کچھ اس طرح کی قوتیں غیر محسوس طریقہ سے کام کررہی ہوتی ہیں ۔

عیسائی مشنریز کے خلاف اسلام مقاصد واہداف کے لیے بہت ساری غیر منقول کاموں کے ساتھ ساتھ کچھ کام بہر حال مفید بھی ہیں جس کا اقرار وستائش میں بخل مناسب نہیں جیسے غربت ، تحقیق وغیرہ

مبارکپوری۔ صفی الرحمٰن، الرحیق المختوم ( لاہور: مکتبہ سلفیہ، 2002ء)، ص 114

Mūbārakpūwri, Ṣafi āl Raḥmٰān, Āl Raḥyq āl Maẖtūwm۔ (Lāhore: Maktabah Salfiyah, 2002), 114

نحل 16: 125

Nahal 16: 125

ابو داود، سلیمان بن اشعث۔ السنن۔ کتاب القضاء ، باب اجتہاد الرای فی القضاء، حدیث 3592

Ābū Dāwٔūd, Sūlaimān bin Āšʿaṯ. āl Sūnan۔ Riaḍ: Dār āl Salām, 1999. Kitāb āl Qaḍāʾ, Bāb āiǧtihād āl Rāi fi āl Qaḍāʾ, 3592

بخاری، محمد بن اسماعیل۔ الجامع الصحیح۔ کتاب الاحکام ، باب فضائل العافی وھو غضبان، حدیث 7158

Būẖāri, Mūḥammad bin āismāʿil۔ āl ǧāmiʿ āl Ṣaḥiḥ. Kitāb āl Āḥkām, Bāb Faḍāil āl Āāfi wa hūwa Ġaḍbān. 7158

حج 22: 78

Ḥaǧ 22: 87

بقرہ 2: 256

Āl Baqaraẗ 2: 256

مبارکپوری، صفی الرحمٰن۔ الرحیق المختوم (لاہور: مکتبہ سلفیہ، 2002ء)، ص 573,572

Mūbārakpūwri, Ṣafi āl Raḥmٰān, Āl Raḥyq āl Maẖtūwm۔ (Lāhore: Maktabah Salfiyah, 2002), 572, 573

عثمانی، مفتی محمد شفیع۔ معارف القرآن (کراچی: مکتبہ معارف القرآن، 2008ء( ، 85/2

ʿūṯmāni, Mūfti Mūḥammad Šafyʿ. Maʿārif āl Qūrʾān. (Karachi: Maktabah Maʿārif āl Qūrʾān, 2008), 2/ 85

طٰہ 44: 43

Ṭāhā 44: 43

ابو داود، سلیمان بن اشعث۔ السنن۔ کتاب الادب، باب ماجاء فی الشعر، حدیث 5011

Ābū Dāwٔūd, Sūlaimān bin Āšʿaṯ. āl Sūnan. Kitāb āl Ādab, Bāb Mā Jā fi āl Šiʿr. 5011

ان کے علاوہ خوش طبعی، محبت و خلوص، عملیت پسندی، استقامت ، خیر خواہی، جہد مسلسل، عالی فکری، متانت ووقار، برداشت وتحمل بھی مشترکہ اصول میں سے ہیں ۔

بقرہ 2: 119، سبا 34: 28، فاطر35: 24، فصلت41 : 4

Āl Baqaraẗ 2: 119, Sabāʾ 34: 28, Fāṭir 24: 35, Fūṣṣilat 4: 41

ابو داود، سلیمان بن اشعث۔ السنن ۔ کتاب الادب، باب فی تنزیل الناس منازلھم، حدیث 4842

Ābū Dāwٔūd, Sūlaimān bin Āšʿaṯ. āl Sūnan. Kitāb āl Ādab, Bāb fi tanzil āl Nās Manāzilahūm. 4842

قرآن حکیم میں حضرت آدم ، نوح ، ادریس، ھود، صالح، ابراہیم ،اسماعیل، اسحاق، لوط، شعیب، یعقوب، یوسف، موسیٰ، ہارون، یونس، داود، سلیمان، ایوب،ذو الکفل، الیاس، زکریا، یحیی ٰ، عیسی ٰ اور محمد علیہم الصلوٰۃ والسلام کا تذکرہ آیا ہے۔ حوالہ کے لیے ذیل کی آیات لاحظہ ہوں۔ انعام6: 86-83، محمد 47: 02، صافات 37: 123، ص 38: 48-41، انبیاء21: 83، مریم 19: 56، یوسف 12: 6,4

Yūwsūf 12: 4,6

قائد کی صفات کے حوالہ جات حسب ذیل ہیں ۔ بقرہ 2: 269, 40، نمل 27: 20،

Āl Baqaraẗ 2: 269, Namal 27: 20

بخاری ،محمد بن اسماعیل، الجامع الصحیح، کتاب الجہاد، باب الجہاد من الایمان، و باب الشجاعۃ فی الحرب، حدیث 2820،

Būẖāri, Mūḥammad bin āismāʿil, āl Ǧāmiʿ āl Ṣaḥiḥ, Kitāb āl Ǧihād, Bāb āl Ǧihād minal Imān, 2820

مسلم بن حجاج، الجامع الصحیح، کتاب الجہاد، باب فقیہ الامام العادل، حدیث 8284

Mūslim bin Ḥaǧāǧ, āl Ǧāmiʿ āl Ṣaḥiḥ, Kitāb āl Ǧihād, Bāb faqih āl Imām ālʿādil, 8284

زمخشری، محمود بن عمر۔ الکشاف (بیروت: دار الکتب العلمیہ، س ن)، 19/1

Zamaẖšari, Mūḥammūwd bin ʿūmar۔ āl Kašāf۔ (Berūt: Dār āl Kūtūb ālʿalamiyah, nd), 1/19

تحفظ دین، تحفظ عقل، تحفظ جان، تحفظ نسل اور تحفظ مال

اعراف 7: 63, 59نیز ھود 11: 26تا 28

Āʿrāf 7: 63, 59, Hūwd11: 26, 27, 28

نوح 71: 26تا 28

Nūwḥ 71: 26-28

اعراف 7: 66 تا 70 ، ھود 11: 50تا 60

Āʿrāf 7: 66-70, Hūwd11: 50-60

اعراف 7: 74تا 79

Āʿrāf 7: 74-79

بقرہ 2: 258

Āl Baqaraẗ 2: 258

انبیاء 21: 68تا 70

Āmbiyāʾ 21: 68-70

ھود 11: 76تا 82

Hūwd11: 76-82

ھود 11: 84 تا 92

Hūwd11: 84-92

قصص 12: 37 تا 40، مومن 40: 23,22، 36، 37

Qaṣaṣ 12: 37-40, Mūwmin 40: 22, 23, 36, 37

قصص 12: 76تا 81، ھود 11: 96 تا 99

Qaṣaṣ 12: 76-81, Hūwd11: 96-99

یوسف 12: 56, 55

Yūwsūf 12: 55, 56

نمل 27: 27تا 44

Namal 27: 27-44

شعراء 26: 214

Šūʿarāʾ 26: 214

عبس 80: 1تا 10

ʿabas 80: 1-10

القلم 68: 12 تا 15

Āl Qalam 68: 12-15

انعام 6: 52

Ānʿām 6: 52

انفال 8: 32

Ānfāl 8: 32

توبہ 9: 79

Taūbaẗ 9: 97

توبہ 9: 84

Taūbaẗ 9: 97

حجر15: 88

Ḥaǧar 15: 88

نحل16: 112

Naḥal 16: 112

بنی اسرائیل 17: 90تا 93

Bani Isrāiyil 17: 90-93

مریم 19: 77

Maryam 19: 77

روم 30: 2

Raūm 30: 2

سبا 34: 34

Sabāʾ 34: 34

دخان44: 44,43

Āl Dūẖān 44: 4, 44

طور 52: 30,29

Ṭūwr 52: 29,30

قمر 54: 45

Āl Qamar 54: 45

منصورپوری، قاضی سلیمان۔ رحمۃ للعالمین ( لاہور: مکتبہ اسلامیہ، 2013ء)، 94/1

Manṣūwrpūri, Qāḍi sūlaimān۔ Raḥmaẗ allilʿālamiyn ۔(Lahore: Maktabah ās Salām, 2013), 1/94

ڈاکٹر سعید احمد، محمد سرور، ’’ محل تفکر وتعقل ، انسانی دل یا دماغ : تعارف و تجزیہ‘‘ القلم ، جلد 27، شمارہ 1 (جون)، 302

Dr. Saiyd Āḥmad, Mūhammad Sarwar, "Centre of Thinking, Human Heart or Brain: Introduction and Analysis", Āl Qalam vol 27, Issue1 (June), 302

تفصیل کے لیے ملاحظہ ہو مصنفین کی زیر طبع کتاب ، اللہ تعالیٰ کا مطلوب انسان : قرآن و سنت کی روشنی میں

یہ حقیقت تو واضح ہے کہ انسانی بدن میں دل ودماغ ہی ایسے اعضاء ہیں جن کاتمام بدن پر کنٹرول ہے۔ البتہ انسان اصلاً کس کے تابع ہے یہ ایک علمی اختلافی مسئلہ ہے جس پر راقم نے سیر حاصل بحث کی ہے ۔ تفصیل کے لیے ملاحظہ ہو:

ڈاکٹر سعید احمد، محمد سرور، ’’ محل تفکر وتعقل ، انسانی دل یا دماغ : تعارف و تجزیہ‘‘ القلم ، جلد 27، شمارہ 1 (جون)، 302

Dr. Saeed Āḥmad, Mūhammad Sarwar, "Centre of Thinking, Human Heart or Brain: Introduction and Analysis", Āl Qalam vol 27, Issue1 (June), 302

Published
2022-12-31
How to Cite
Muhammad Sarwar, Muhammad Zahid Zaheer Iqbal. (2022). مسلم قیادت پر عیسائی مشنری تحریک کے اثرات اور ان کا تدارک : سیرت النبی ﷺ کی روشنی میں . Al Qalam, 27(2), 124-138. https://doi.org/10.51506/al qalam.v27i2.1773